خار زار صحافت۔۔۔قسط نواسی

0
912

چلے  سوئے  کشمیر

تحریر:  محمد  لقمان

یہ  انیس  سو  اٹھانوے  کے  جون  کے  پہلے  ہفتے  کی  بات  ہے  کہ  مجھے  اےپی پی  ہیڈ  آفس  سے  پیغام  آیا  کہ  وفاقی  بجٹ  کی  کوریج  کے  لئے  نو  یا  دس  جون  کو اسلام آباد  پہنچ  جاوں۔  سوچا  کہ  بیگم  اور بیٹی  سائرہ  جس  کی  عمر  اس  وقت  صرف  دس  ماہ  تھی،  کو  بھی  ساتھ  لیتا  جاوں۔  لاہور  کی گرمی  میں  وہ کیا  کریں گے۔  اگلے  ہی  دن  لاہور  آفس  سے  چند  ہزار  روپے  ایڈوانس  میں  لیے  اور  بس  کے  ذریعے بمع  اہل  و عیال   راولپنڈی  اپنے  تایا  کے  گھر   پہنچ  گیا۔  سوچا  کہ  ابھی  تو  بجٹ  میں  دو  تین  باقی  ہیں  کیوں  نہ  مری  کی  سیر  کر  لی  جائے۔  جون  کے  مہینے  میں  مری  جانا  کتنا  غیر  مناسب  تھا۔ اس  کا  اندازہ  وہاں  پہنچ  کر  ہی  ہوا۔  بارہ  ایک  بجے  اس  پہاڑی  مقام  پر  درجہ  حرارت  اتنا  ہی  تھا  جتنا  کہ  ہم  لاہور  میں  چھوڑ  کر  آئے تھے۔  بچی  کو  پریم  میں  ڈال  کر  تھوڑی  دیر  کے لئے  ادھر  ادھر  گھومے  مگر  ذرا  مزہ  نہ  آیا۔  سر  شام  ہی  واپس  راولپنڈی  آگئے۔  اگلی  صبح   اے  پی  پی  کے  ہیڈ  آفس  پہنچا  تو      وفاقی  بجٹ  کے  بارے  میں  میٹنگ  میں  شرکت  کی۔  جس  میں  ہر  کسی  کو  ذمہ  داریاں  تفویض  کی  گئیں۔  میرے  ذمے  قومی  اسمبلی  میں تقریر  کو  سن  کر  فورا دفتر  آکر  ابتدائی  خبر  فائل کرنا  تھی۔  ابھی  میٹنگ  سے  فارغ  ہی  ہوئے  تھے کہ  مجھے  غنی  چوہدری  صاحب  نے  بلا  لیا۔  حسب  روایت  اپنے  تکیہ  کلام  یار  سے  بات  شروع  کی اور  کہنے  لگے  کہ  کل  آپ  مظفر  آباد  چلے  جائیں  وہاں  آزاد کشمیر  کے  اسپیکر  راجہ ممتاز  حسین  راٹھور  کے  خلاف  پیش  ہونے والی  عدم  اعتماد  کی  تحریک کو آپ نے ہی کور کرنا ہے۔  میں  نے  کہا  کہ  ہر  سال  میں وفاقی  بجٹ  کو  کور رکرتا  ہوں۔  کسی  اور  کو  بھیج دیں ۔  کہنے  لگے  کہ  یار  آزاد  کشمیر  کا  پریس  انفرمیشن  ڈیپارٹمنٹ  چاہتا  ہے  کہ  کوئی  اسلام آباد  سے  آکر  اس  اہم  معاملے  کو  کور  کرے۔ وہ  نہیں  چاہتے  کہ  اے  پی  پی  کا  مظفر  آباد  میں  نمائندہ  سجاد  حیدر  اس  کی  کوریج  کرے۔ دوسری بات یہ  ہے کہ کل اسلام آباد میں سیاسی سرگرمیاں بہت ہیں اس لیے کسی اور کو نہیں بھیج سکتے۔  میں  نے  چوہدری  صاحب  کو  بتایا  کہ  میرے  ساتھ  میری  بیوی  اور  شیر  خوار  بچی  بھی  ہیں۔  انہوں  نے  کہا  کہ بیگم  کو  بھی کشمیر  کی سیر  کروا  دیں۔  رہا  اضافی  خرچہ تو اس کو  بھی  اے پی پی  برداشت کرلے گی۔ قصہ  مختصر  کہ  اب  مظفر  آباد  جائے  بغیر  کوئی  چارہ  نہ  تھا۔  آزاد کشمیر  کے  رہنے  والے  ایک  صاحب  سے  راولپنڈی  سے  مظفر آباد  جانے  کے  لئے  روٹ  کا  پوچھا  تو  اس  نے  بتایا  کہ  پہلے  راولپنڈی  سے  مانسہرہ  جایا جائے  اور  وہاں  سے  مظفر  آباد  والی  وین  میں بیٹھوں۔  اس  دوران  ہیڈ  آفس  نے  مظفرآباد  کے  نیلم  ویو  ہوٹل  میں  میرے  لیے  ایک کمرہ  بھی  بک  کروا  دیا تھا۔   شام  کو  راولپنڈی  میں  مری  روڈ  کے  ساتھ  واقع ہری پورہ رحمانیہ میں   اپنے  تائے  کے  گھر  پہنچا  اور  بیگم  کو  اگلی  صبح  کے  پروگرام  کے  بارے  میں بتایا۔  خیر  اگلی  صبح  ہم  پیر ودھائی  بس  اسٹینڈ  سے  مانسہرہ  والی  ویگن  پر  سوار  ہوئے۔  جو  جی  ٹی  روڈ  پر حسن ابدال  سے  ہوتی ہوئی۔ پہلے  ہری  پور پہنچی ۔ اس  کے بعد حویلیاں ،  ایبٹ آباد اور  قلندر آباد سے ہوتی ہوئی  تین  چار  گھنٹوں  میں  مانسہرہ  کے  لاری  اڈہ  پر  پہنچ  گئی۔ مانسہرہ  ہزارہ  ڈویژن  کا  ایک  اہم  ضلع  ہے۔ مگر  اس کا  لاری اڈہ  انتہائی گندہ  تھا۔ بہر حال تھوڑی دیر میں  مظفر آباد جانے والی ویگن مل گئی۔ جو کہ  بفا اور شنکیاری سے ہوتی  ہوئی  دو ڈھائی گھنٹے میں آزاد کشمیر کے دارالحکومت مظفر  آباد  پہنچ گئی۔ اس زمانے میں نہ تو کشمیر  ایکسپریس  وے تھا اور نہ ہی  ہزارہ  موٹر  وے۔  راولپنڈی سے مظفر آباد  تک کا سفر  انتہائی تھکن آور  ثابت  ہوا  تھا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here